The government bureau has affirmed setting up a commission to examine the petroleum deficiency in the nation.

The foundation of the advisory group was reported by Information Minister Shibli Faraz in a question and answer session Tuesday evening.

Faraz said the bureau has endorsed the constitution of a commission to ask into the reasons for petroleum lack a month ago. He said the commission will offer suggestions to guarantee that such a circumstance doesn’t create in future.

It will be chosen later who will head the commission and who its individuals will be, it was chosen in Tuesday’s bureau meeting, which was led by Prime Minister Imran Khan.

Wheat and sugar were talked about. The clergyman said wheat is being provided to the flour factories in Punjab and the common government is giving Rs16 billion in appropriations. He, notwithstanding, said that the private and open divisions have been coordinated to import wheat to meet the deficiency of 1.5 million tons of wheat.

On the COVID-19 circumstance, Faraz said the pattern of the cases had significantly declined because of the administration’s viable savvy lockdown strategy.

He, in any case, cautioned that thoughtlessness during Eidul Azha will again raise coronavirus cases and encouraged individuals to carefully keep the standard working methods.

Ministry of Foreign Affairs on Sunday excused a story distributed in an Australian media source on a Wuhan lab directing claimed secretive activities in Pakistan, calling it “politically roused and counterfeit”.

“It is made out of bending of realities and creations that quote mysterious sources,” said an announcement gave by the service, through the workplace of the Foreign Office representative.

The Klaxon report, citing anonymous “knowledge specialists”, guarantees China’s Wuhan Institute of Virology has “set up activities in Pakistan as a feature of a more extensive hostile against India and Western opponents”.

“The mystery office is purportedly making Bacillus anthracis like microorganisms which could be utilized in organic fighting,” the report distributed on July 23 asserts.

“There is nothing mystery about the Bio-Safety Level-3 (BSL-3) Laboratory of Pakistan alluded to in the report,” said the announcement by Ministry of Foreign Affairs gave today. “Pakistan has been offering data about the office to the States Parties to the Biological and Toxins Weapons Convention (BTWC) in its accommodation of Confidence Building Measures.

“The office is intended for demonstrative and defensive framework improvement by Research and Development (R&D) on rising wellbeing dangers, observation and infection flare-up examination.

“Pakistan carefully complies with its BTWC commitments and has been one of the most vocal supporters for a solid check component to guarantee full consistence by the States Parties to the Convention.”

“The endeavor to cast slanders about the office is especially ludicrous against the background of the Covid-19 pandemic, which has featured the requirement for better readiness in the regions of illness observation and control and global coordinated efforts in such manner, predictable with Article X of BTWC,” included the announcement.

The Wuhan Institute of Virology went under investigation in April with the US testing whether the infection really started in the virology establishment — situated in China’s coronavirus focal point — with a high-security biosafety research center.

Chinese researchers have said the infection likely hopped from a creature to people in a market that sold untamed life. Be that as it may, the presence of the office has fuelled fear inspired notions that the germ spread from the Wuhan Institute of Virology, explicitly its P4 research facility which is prepared to deal with risky infections.

The chief of the researc

“It is made out of bending of realities and creations that quote mysterious sources,” said an announcement gave by the service, through the workplace of the Foreign Office representative.

The Klaxon report, citing anonymous “knowledge specialists”, guarantees China’s Wuhan Institute of Virology has “set up activities in Pakistan as a feature of a more extensive hostile against India and Western opponents”.

“The mystery office is purportedly making Bacillus anthracis like microorganisms which could be utilized in organic fighting,” the report distributed on July 23 asserts.

“There is nothing mystery about the Bio-Safety Level-3 (BSL-3) Laboratory of Pakistan alluded to in the report,” said the announcement by Ministry of Foreign Affairs gave today. “Pakistan has been offering data about the office to the States Parties to the Biological and Toxins Weapons Convention (BTWC) in its accommodation of Confidence Building Measures.

“The office is intended for demonstrative and defensive framework improvement by Research and Development (R&D) on rising wellbeing dangers, observation and infection flare-up examination.

“Pakistan carefully complies with its BTWC commitments and has been one of the most vocal supporters for a solid check component to guarantee full consistence by the States Parties to the Convention.”

“The endeavor to cast slanders about the office is especially ludicrous against the background of the Covid-19 pandemic, which has featured the requirement for better readiness in the regions of illness observation and control and global coordinated efforts in such manner, predictable with Article X of BTWC,” included the announcement.

The Wuhan Institute of Virology went under investigation in April with the US testing whether the infection really started in the virology establishment — situated in China’s coronavirus focal point — with a high-security biosafety research center.

Chinese researchers have said the infection likely hopped from a creature to people in a market that sold untamed life. Be that as it may, the presence of the office has fuelled fear inspired notions that the germ spread from the Wuhan Institute of Virology, explicitly its P4 research facility which is prepared to deal with risky infections.

The chief of the research facility, Yuan Zhiming, had said that “it is extremely unlikely this infection originated from us”. None of his staff had been tainted, he told the English-language state telecaster CGTN, including the “entire establishment is completing examination in various regions identified with the coronavirus”.

h facility, Yuan Zhiming, had said that “it is extremely unlikely this infection originated from us”. None of his staff had been tainted, he told the English-language state telecaster CGTN, including the “entire establishment is completing examination in various regions identified with the coronavirus”.

Education Transformation In Pakistan

With assessments of public sentiment demonstrating a consistent fall in Prime Minister Imran Khan’s notoriety, he has chosen to utilize religion for political increases. While it probably won’t spare his political fortunes, it would fortify disruptive propensities in the public eye and lead the country off track from the pluralism and comprehensiveness supported by Founding Father Quaid-e-Azam Mohammad Ali Jinnah.

Islam isn’t under danger in the nation. Pakistan stays a Muslim-lion’s share state as it was the point at which it appeared in 1947. The mosques and theological schools have expanded. The Objectives Resolution stays a reasonable piece of the constitution of the Islamic Republic of Pakistan. The situation being what it is, it is unlimited why at this crossroads the Punjab Assembly has thought of it as important to pass the Tahafuz-e-Bunyad-e-Islam bill. What this would do is to raise the caution that Islam is as of now under danger, giving grist to the plants of intrigue scholars and fortify the fanatic components.

Under the rubric of presenting uniform training framework, younger students are being over-burden with a tremendous volume of strict material. A huge number of hafizes and qaris would be utilized inside typical schools. With Punjab government showing more energy than other commonplace organizations, it has chosen to present another necessary course dependent on Urdu interpretation of the Holy Quran for all alumni and postgraduate projects. The PTI’s extremist strictness leaves previous despot Ziaul Haq a long ways behind and is intended to energize the remainders of his past admirers around Mr Khan. In the thirteenth century the books of Muslim thinker Ibne Rushd, who represented opportunity of thought, were educated in Muslim Spain yet were censured by the Catholic Church as incendiary and profane.

On Thursday the PTI’s Punjab government restricted 100 books, some of them instructed in schools and which were distributed by Oxford and Cambridge for containing “profane, irreverent and hostile to Pakistan content”. This is the manner by which an individual with a radical mentality takes a gander at sees unique in relation to his own. What is required in schools is to advance a scrutinizing mentality as opposed to grant learning through repetition and recreating it in the tests. The PTI’s instruction strategy will make another age of fanatics at chances with the world on the loose.

PM Imran reports Rs30bn sponsorship for Naya Pakistan Housing Project

وزیر اعظم عمران خان نے جمعہ کو نیا پاکستان ہاؤسنگ پروجیکٹ (این پی ایچ پی) کے لئے 30 ارب روپے کی سبسڈی دینے کا اعلان کیا ، جس میں تعمیراتی صنعت اور سرمایہ کاروں کو “موقع سے فائدہ اٹھانے” پر زور دیا گیا ، کیونکہ حکومت کورونا وائرس پھیلنے کے معاشی اثرات کو کم کرنے کی کوشش کر رہی ہے

اسلام آباد میں رہائش ، تعمیر و ترقی کے قومی رابطہ کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کے بعد قوم سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا ، “اس کا مطلب یہ ہے کہ تعمیر کیے جانے والے پہلے 100،000 مکانوں پر 30 لاکھ روپے کی سبسڈی دی جائے گی۔”

 

“مزید ، وہ لوگ جو اپنے گھر تعمیر کرنے کے لئے بینک سے قرض لیں گے ، انہیں سبسڈی والے سود کی شرح دی جائے گی۔ 5 مرلہ مکانات کی شرح سود پانچ فیصد ہوگی اور دس مرلہ مکانوں کے لئے یہ سات فیصد ہوگی۔”

 

وزیر اعظم نے مزید کہا کہ حکومت نے اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) اور دیگر تمام بینکوں سے بھی بات کی ہے اور ان سے کہا ہے کہ وہ تعمیراتی صنعت کے لئے اپنے پورٹ فولیو کا پانچ فیصد مختص کرے۔ “یہ تقریبا3330 ارب روپے آتا ہے۔”

اس کے علاوہ ، “تمام صوبوں سے مشاورت کے بعد ، ہم نے بھی NOCs [کوئی اعتراض سرٹیفکیٹ] کم کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور تمام صوبوں میں ون ونڈو آپریشن کیا ہے ،” انہوں نے مزید کہا کہ اس کے اندر بھی ایک وقت کی حد ہوگی۔ منظوری متعلقہ اتھارٹی کے ذریعہ دی جائے گی۔

 

انہوں نے بتایا کہ صوبوں میں بھی ٹیکسوں میں کمی کی گئی ہے۔ “اور ، اور یہ صرف وبائی بیماری کی وجہ سے ہی ہے ، [31 دسمبر تک] سرمایہ کاری کے وسیل سے پوچھ گچھ نہیں کی جائے گی۔ کوئی نہیں پوچھے گا کہ یہ فنڈ کہاں سے آئے ہیں۔”

 

انہوں نے کہا ، “ہم یہ مراعات پیش کررہے ہیں کیونکہ ہم نے عالمی برادری سے بات کی ہے اور اس بات پر تبادلہ خیال کیا ہے کہ ہماری معیشت بنیادی طور پر غیر سند شدہ ہے […] لہذا ہمارے پاس 31 دسمبر تک ہے۔”

 

انہوں نے سرمایہ کاروں کو موقع کی اس مختصر سی ونڈو سے فائدہ اٹھانے کی تاکید کرتے ہوئے اپنے خطاب کا اختتام کیا۔

 

شروع میں ، وزیر اعظم نے اپنی تقریر کا آغاز یہ کہہ کر کیا کہ این پی ایچ پی کا بنیادی مقصد عام آدمی کو رہائش فراہم کرنا تھا۔ انہوں نے کہا کہ “لیکن ہمیں اپنے سفر میں بہت سی رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑا۔”

 

انہوں نے کہا ، “اگر آپ ہندوستان کو دیکھیں تو بینکوں کے ذریعہ ہاؤسنگ فنانسنگ 10pc ہے اور یورپ میں تقریبا 90pc۔ پاکستان میں یہ 0.2pc ہے۔” انہوں نے مزید کہا کہ پہلا قدم اس مسئلے کو حل کرنا تھا۔

 

“پھر تعمیراتی صنعت میں تاخیر ہوئی۔ ان پر طرح طرح کے ٹیکس لگتے تھے ، اجازت نہیں ملتی تھی ، قرضوں میں پریشانی ہوتی تھی۔”

 

انہوں نے کہا کہ ہاؤسنگ ، تعمیرات اور ترقی سے متعلق این سی سی کا مقصد تعمیراتی صنعت کی راہ میں حائل رکاوٹوں کو دور کرنا ہے ، انہوں نے مزید کہا کہ صوبوں کو بھی اس پر آمادہ کیا گیا ہے۔ وزیر اعظم خود ہر ہفتے کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کریں گے۔

 

انہوں نے مزید کہا کہ وبائی مرض نے پوری دنیا میں کساد بازاری کا باعث بنا تھا ، اور ممالک معاشی پہیے کا رخ موڑنے کے لئے گھوم رہے ہیں۔ انہوں نے کہا ، “[لہذا] ہم نے رہائش اور تعمیراتی شعبے میں معیشت کو چلانے کا فیصلہ کیا ہے ،” انہوں نے مزید کہا کہ اس سے روزگار کے مواقع بھی میسر ہوں گے۔

 

CLICK TO DIRECT NAYA PAKISTAN WEBSITE

COVID-19: 58 clinical specialists pass on battling coronavirus in Pakistan

اسلام آباد: پاکستان صحت کی دیکھ بھال کرنے والے 58 فراہم کنندگان ، بشمول 42 ڈاکٹروں کو کورونا وائرس سے محروم کردیا جب وہ جانیں بچانے کے مشن پر تھے۔ طبی پیشہ ور افراد جنہوں نے COVID-19 سے جنگ لڑی وہ بھی 13 پیرامیڈکس اینڈ سپورٹ عملہ ، دو نرسیں اور ایک میڈیکل طالب علم شامل ہیں۔ سندھ سب سے زیادہ متاثرہ صوبہ تھا جہاں کم از کم 22 صحت کی سہولیات فراہم کرنے والے اپنی زندگی سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں ، اس کے بعد خیبر پختونخواہ میں 11 صحت کی دیکھ بھال کرنے والے فراہم کنندہ COVID کا شکار ہوگئے۔ کم از کم 10 اموات کی اطلاع پنجاب سے ، بلوچستان سے سات ، پانچ اسلام آباد اور تین گلگت بلتستان سے ملی۔

پاکستان میں 5 ہزار سے زائد صحت کارکنان متاثر ہیں

وزارت صحت کے سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ، 30 جون تک پورے پاکستان میں کم از کم 5،367 صحت کارکنوں کو اس وائرس نے متاثر کیا ہے۔ ان میں سے 2،798 صحت یاب ہوچکے ہیں جبکہ 2،569 ابھی زیر علاج یا خود تنہائی میں ہیں اور 240 اسپتال میں داخل ہیں۔

خیبر پختونخوا – سب سے زیادہ انفیکشن خیبرپختونخوا سے رپورٹ ہوئے جہاں 1،809 صحت کی دیکھ بھال کرنے والی کمپنیوں ، 856 ڈاکٹروں ، 282 نرسوں اور 671 پیرامیڈیکس کو اس مرض کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

سندھ ۔صوبہ سندھ میں 1034 ڈاکٹروں ، 121 نرسوں اور 242 پیرامیڈکس سمیت صحت کی دیکھ بھال کرنے والے 1،397 افراد متاثر ہوئے ہیں۔ سندھ میں صحت کی دیکھ بھال کرنے والے کم سے کم 22 فراہم کنندگان اپنی زندگی سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں۔

پنجاب – پنجاب میں اب تک لگ بھگ 1،100 صحت کی دیکھ بھال کرنے والے کارکن کورونا وائرس میں مبتلا ہوچکے ہیں ، جن میں 625 ڈاکٹر ، 168 نرسیں اور 307 پیرامیڈکس اور دیگر معاون عملہ شامل ہیں۔ آئی سی ٹی ۔اسلام آباد میں ، وائرس سے متاثرہ 451 صحت کی دیکھ بھال فراہم کرنے والے ، جن میں 315 ڈاکٹرز ، 51 نرسیں اور 85 پیرامیڈیکس اور دیگر عملہ شامل ہیں۔

بلوچستان – صوبہ بلوچستان میں کم از کم 422 صحت کارکنوں کا مثبت تجربہ کیا گیا ، جن میں 345 ڈاکٹر ، آٹھ نرسیں اور 69 پیرامیڈیکس ہیں۔

گلگت بلتستان – گلگت بلتستان کے علاقے میں 55 ڈاکٹروں سمیت صحت کی دیکھ بھال کرنے والے کارکنوں میں کورون وائرس کے 105 واقعات رپورٹ ہوئے۔

پاکستان کے زیر انتظام کشمیر – کم سے کم 83 صحت کارکنوں کو وائرس کا مرض لاحق ہوا ہے ، ان میں سے 45 ڈاکٹر ہیں۔ تاہم ابھی تک طبی برادری میں کسی جانی نقصان کی اطلاع نہیں ہے۔

Scholarships For Pakistan 2020

Faculty Of Social Sciences Dean’s Excellence International Award At University Of Ottawa

سکالرشپ کی تفصیل:

یونیورسٹی آف اوٹاوا میں فیکلٹی آف سوشل سائنسز ڈین کا ایکسی لینس انٹرنیشنل ایوارڈ بین الاقوامی طلباء کے لئے کھلا ہے اسکالرشپ اوٹاوا یونیورسٹی میں پڑھے جانے والے سوشل سائنسز کے شعبے میں انڈرگریجویٹ لیول پروگرام (پروگراموں) کی اجازت دیتی ہے اس اسکالرشپ کی آخری تاریخ 01 نومبر 2020 ہے۔

ڈگری لیول:

یونیورسٹی آف اوٹاوا میں فیکلٹی آف سوشل سائنسز ڈین کا ایکسی لینس انٹرنیشنل ایوارڈ انڈرگریجویٹ سطح کے پروگراموں کو شروع کرنے کے لئے دستیاب ہے۔

دستیاب مضامین:

اس اسکالرشپ پروگرام کے تحت مندرجہ ذیل مضمون مطالعہ کے لئے دستیاب ہیں۔

سماجی علوم

اہل شہریت:

بین الاقوامی طلباء اس اسکالرشپ پروگرام کے اہل ہیں۔

اسکالرشپ کے فوائد:

گرانٹ کی مالیت 1،500 ڈالر ہے۔ اس ایوارڈ سے تعلیمی اخراجات والے تمام اہل طلبا کو مدد ملے گی۔

اہلیت کا معیار:

اہل ہونے کے لئے ، درخواست دہندگان کو دیئے گئے تمام معیارات کو پورا کرنا ضروری ہے۔

بین الاقوامی طلباء ہونے چاہ.

یونیورسٹی میں انڈرگریجویٹ ڈگری پروگرام کے لئے درخواست دینی ہوگی۔

درخواست کا طریقہ کار:

وہ درخواست دہندگان جنہوں نے انڈرگریجویٹ ڈگری پروگرام میں جگہ حاصل کی ہے وہ اس درخواست کے لئے درخواست دے سکتے ہیں۔

For Apply : https://www.uottawa.ca/graduate-studies/programs-admission

Curtin University Dubai – Engineering Grant For International Students

سکالرشپ کی تفصیل:

کرٹین یونیورسٹی دبئی – بین الاقوامی طلباء ، بین الاقوامی طلباء کے لئے بین الاقوامی طلباء کے لئے انجینئرنگ گرانٹ کھلا ہے۔ وظائف کرٹن یونیورسٹی دبئی میں پڑھائے جانے والے انجینئرنگ کے شعبے میں انڈرگریجویٹ سطح کے پروگراموں کی اجازت دیتا ہے اس اسکالرشپ کی آخری تاریخ 23 جولائی 2020 ہے۔

 
ڈگری لیول:
کرٹن یونیورسٹی دبئی - بین الاقوامی طلباء کے لئے انجینئرنگ گرانٹ انڈرگریجویٹ سطح کے پروگرام کرنے کے لئے دستیاب ہے۔
 
دستیاب مضامین:
اس اسکالرشپ پروگرام کے تحت مندرجہ ذیل مضمون مطالعہ کے لئے دستیاب ہیں۔
 
انجینئرنگ
اہل شہریت:
گھریلو اور بین الاقوامی طلباء اس اسکالرشپ پروگرام کے اہل ہیں
 
اسکالرشپ کے فوائد:
تمام اہل درخواست دہندگان کو کرٹن یونیورسٹی دبئی میں انڈرگریجویٹ ڈگری حاصل کرنے کے لئے تعلیمی فنڈ فراہم کیا جائے گا۔
 
اہلیت کا معیار:
اگر آپ اس موقع کے لئے منتخب ہونا چاہتے ہیں تو ، پھر یقینی بنائیں کہ آپ ان ساری ضروریات کو پورا کرتے ہیں:
 
گھریلو یا بین الاقوامی طالب علم ہوسکتا ہے
سائنس ، اس ، انجینئرنگ ، یا ریاضی میں ہائ اسکول کے بقایا گریڈز حاصل کرنا ہوں گے
ضروری ہے کہ کرٹن دبئی میں انجینئرنگ پروگرام کے کسی منظور شدہ پروگرام میں جگہ حاصل کرلی ہو۔

For Apply: https://curtindubai.ac.ae/application-process/

Macquarie University – PhD Scholarship In Financial Econometrics, 2020

سکالرشپ کی تفصیل:
میکوری یونیورسٹی - مالی ایکونومیٹرکس ، 2020 میں پی ایچ ڈی اسکالرشپ بین الاقوامی طلباء کے لئے کھلا ہے۔ اسکالرشپ میکوئری یونیورسٹی میں پڑھائے جانے والے ایکونومیٹرکس کے شعبے میں پی ایچ ڈی سطح کے پروگراموں کی اجازت دیتی ہے اس اسکالرشپ کی آخری تاریخ 20 دسمبر 2020 ہے۔
 

ڈگری لیول:

مکیوری یونیورسٹی – مالی ایکونومیٹرکس میں پی ایچ ڈی اسکالرشپ ، 2020 مکوئری یونیورسٹی میں پی ایچ ڈی سطح کے پروگراموں کو شروع کرنے کے لئے دستیاب ہے۔

 

دستیاب مضامین:

اس اسکالرشپ پروگرام کے تحت مندرجہ ذیل مضمون مطالعہ کے لئے دستیاب ہیں۔

 

ایکونومیٹرکس

اہل شہریت:

بین الاقوامی طلباء اس اسکالرشپ پروگرام کے اہل ہیں

 

اسکالرشپ کے فوائد:

فنڈنگ ​​پروگرام میں ٹیوشن فیس آفسیٹ اور مککوری یونیورسٹی ریسرچ ایکسلینس اسکالرشپ (ایم کیو آر ای ایس) کا رہائشی الاؤنس / وظیفہ شامل ہے۔ گرانٹ کے وظیفہ کے اجزا کی فی الحال قیمت سالانہ AU 28،092 ہے (2020 کی شرح ، ٹیکس سے مستثنیٰ)۔

 

اہلیت کا معیار:

، درخواست دہندگان کو درج ذیل معیارات کو پورا کرنا ہوگا:

 

ایکونومیٹرکس میں پس منظر ہونا چاہئے اور مالیاتی مارکیٹ میں مضبوط دلچسپی لینا چاہئے۔

دوسرے سال میں کم از کم ڈسٹیکشن لیول (75٪ یا اس سے زیادہ) کے گریڈ والے ماسٹر آف ریسرچ (ایم آر ایس) کی تکمیل۔





امتیازی سطح (٪ 75٪ یا اس سے زیادہ) پر ایک بڑے تحقیقی جزو کے ساتھ دو سالہ ماسٹر ڈگری ۔

For Apply: https://www.mq.edu.au/research/phd-and-research-degrees/how-to-apply/submit-your-application

Rhodes Scholarships University Of Oxford UK

سکالرشپ کی تفصیل:

آکسفورڈ یونیورسٹی کے معروف روڈس اسکالرشپ پوسٹ گریجویٹ ایوارڈز ہیں جو یونیورسٹی آف آکسفورڈ میں غیرمعمولی آل راؤنڈ بین الاقوامی طلباء کی حمایت کرتی ہیں۔ 1902 میں سیسل روڈس کی مرضی سے قائم کیا گیا ، روڈس دنیا کا سب سے قدیم اور شاید سب سے مائشٹھیت بین الاقوامی اسکالرشپ پروگرام ہے۔

 

رہوڈز اسکالرز کا انتخاب صنف ، صنفی شناخت ، ازدواجی حیثیت ، جنسی رجحان ، نسل ، نسلی نژاد ، رنگ ، مذہب ، معاشرتی پس منظر ، ذات یا معذوری کی پرواہ کیے بغیر کیا گیا ہے۔ روڈس ٹرسٹ باصلاحیت نوجوان خواتین اور متعدد پس منظر اور مفادات کے حامل مردوں کی طرف سے درخواستوں کا پرتپاک خیرمقدم کرتا ہے جو دنیا کے مستقبل کے لئے عوامی حوصلہ افزائی کرنے والے قائدین کی صلاحیت کو ظاہر کرتے ہیں۔ نیچے دی گئی ویڈیو میں ، موجودہ روڈس اسکالرز ذاتی بیان کے بارے میں بات کرتے ہیں اور درخواست کے عمل کے اس حصے کے لئے کیا ضروری ہے:

 

ڈگری لیول:

آکسفورڈ برطانیہ کی رہوڈس اسکالرشپ یونیورسٹی آکسفورڈ یونیورسٹی میں پوسٹ گریجویٹ سطح کے پروگرام کرنے کے لئے دستیاب ہے۔

 

دستیاب مضامین:

رہوڈز اسکالرز بہت سے تعلیمی پس منظر سے آتے ہیں اور آکسفورڈ میں مختلف قسم کے کورسز کرتے ہیں۔ درخواست دہندگان کو ڈگری کا تعین کرنے کے لئے آکسفورڈ یونیورسٹی آف پوسٹ گریجویٹ کورس پروگراموں کا جائزہ لینا چاہئے جس کے لئے وہ درخواست دیں گے۔ رہوڈس اسکالرشپ کے ذریعہ مکمل وقتی پوسٹ گریجویٹ ڈگریوں پر بہت کم پابندیاں ہیں۔ روڈس اسکالرز اسکالرشپ کے دوسرے سال میں صرف ماسٹر آف بزنس ایڈمنسٹریشن یا ماسٹر آف فنانشل اکنامکس ہی انجام دے سکتے ہیں۔

ہل شہریت:

آسٹریلیا ، برمودا ، کینیڈا ، جرمنی ، ہانگ کانگ ، ہندوستان ، جمیکا اور دولت مشترکہ کیریبین ، کینیا ، نیوزی لینڈ ، پاکستان ، جنوبی افریقہ (بشمول جنوبی افریقہ ، بوٹسوانا ، لیسوتھو ، ملاوی ، نمیبیا ، اور سوازیلینڈ) ، متحدہ عرب امارات ، ریاستہائے متحدہ ، زیمبیا ، اور زمبابوے۔

 

اسکالرشپ کے فوائد:

روڈس اسکالرشپ میں یونیورسٹی اور کالج کی تمام فیس ، یونیورسٹی کی درخواست کی فیس ، اسکالرشپ کے آغاز پر رہائشی اخراجات کے لئے ذاتی وظیفہ اور آکسفورڈ کے لئے ایک اکانومی کلاس کا ہوائی جہاز شامل ہے ، نیز اختتام پر طلبہ کے آبائی ملک کے لئے معیشت کی پرواز بھی شامل ہے۔ اسکالرشپ کی

 

اہلیت کا معیار:

اہل اہلیت درج ذیل معیارات روڈس اسکالرشپ کے تمام درخواست دہندگان پر لاگو ہوتی ہے۔

 

شہریت اور رہائش: ہر درخواست دہندگان کو رہائشی حلقے کی شہریت اور رہائش کی ضروریات پوری کرنا ہوں گی جس کے لئے وہ درخواست دے رہے ہیں۔

عمر: انتخابی انتخاب کے بعد سال کے 1 اکتوبر تک انتخابی حلقوں اور کم سے کم عمر کی حد 18 سے زیادہ سے زیادہ 28 تک کی حدود انتخابی حلقوں کے درمیان ہوتی ہے۔ زیادہ تر انتخابی حلقوں میں ، عمر کی حد 24 یا 25 ہے۔ درخواست دینے سے پہلے براہ کرم اپنے انتخابی حلقے کے لئے مخصوص عمر کی ضروریات کو غور سے دیکھیں۔

تعلیم: تمام درخواست دہندگان کو لازمی طور پر اعلی درجے کی کامیابی حاصل ہوچکی ہے تاکہ اگلے انتخابات میں اکتوبر تک بیچلر ڈگری کی تکمیل کو یقینی بنائے۔ آکسفورڈ یونیورسٹی میں داخلے کو یقینی بنانے کے لئے تعلیمی مقامات کو کافی حد تک اونچا ہونا چاہئے ، جس میں داخلے کی بہت مسابقتی ضروریات ہیں ، اور یہ یقین دلانے کے لئے کہ روڈس اسکالرز آکسفورڈ میں ایک اعلی تعلیمی معیار کے مطابق کارکردگی کا مظاہرہ کریں گے۔ انفرادی حلقے پہلے یا مساوی کی وضاحت کرسکتے ہیں۔ براہ کرم ملک کے رابطوں کے ذریعے تفصیلی ضروریات کو دیکھیں۔ کچھ حلقوں کو انڈرگریجویٹ ڈگری کی ضرورت ہوتی ہے جو درخواست کے انتخابی حلقہ میں لیا جائے۔

انتخاب کے معیار: سیسل روڈس اسکالرز کے انتخاب میں استعمال ہونے والے چار معیارات کی نشاندہی کرتا ہے۔
 

ادبی اور تعلیمی حصولکسی کی صلاحیتوں کو مکمل طور پر استعمال کرنے کی توانائی

سچائی ، جر courageت ، ڈیوٹی سے عقیدت ، کمزوری کے لئے ہمدردی اور تحفظ ، مہربانی ، خود غرضی اور رفاقت

کردار اور جبلت کی اخلاقی قوت کی رہنمائی ، اور اپنے ہم وطنوں میں دلچسپی لینا۔

For Apply: http://www.rhodeshouse.ox.ac.uk/page/applying-for-the-rhodes-scholarship